ملکہ ترنم کا خطاب حاصل کرنیوالی مشہور پاکستانی گلوکارہ اور اداکارہ ملکہ ترنم نورجہاں اکیس ستمبر انیس صد پچیس کو پیدا ہوئیں۔ وہ جنوبی ایشیا کے مشہور گلوکاروں میں سے ایک تھیں۔ملکہ ترنم نورجہاں نے اٹھارہ ہزار سے زائد گانے ریکارڈ کروائے۔ جو  کہ اردوپنجابی سندھی اور پشتو میں ہیں ۔نورجہاں ایک مسلمان گھرانے میں قصور شہرمیں پیدا ہوئیں اور وہ امداد علی اور فتح بی بی کے گیارہ بچوں میں سے ایک تھیں۔

پانچ سال کی عمر میں انہوں نے گانا شروع کر دیا تھا۔ پھر انہوں نے کلاسیکل موسیقی کی تعلیم استاد بڑے غلام علی خان صاحب سے حاصل کی ۔  پھر انہوں نے باقاعدہ طور پر گانا شروع کر دیا تھا۔  نورجہاں نے اپنی زندگی میں بہت سے ایسے یاد گار گانے گائے تھے جن کو سن کر آ ج بھی لوگ سراہتے ہیں ۔ ان کی آواز میں ایک جادو تھا ۔  نورجہاں نے پاکستان بننے کے بعد بمبئی کو چھوڑ کر کراچی آنے کا فیصلہ کر لیا۔ پھر انہوں نے کچھ فلموں میں بطور اداکارہ بھی کام کیا ۔  یہ ان کی زندگی کے بہترین لمحات تھے ۔  جب ہر طرف ان کی آواز ہی گونجتی تھی۔  پھر انیس صد پینسٹھ کی پاک بھارت جنگ میں انہوں نے اپنے فوجی بھائیوں کا حوصلہ بڑھانے کے لیے بھی قومی گیت گائے ۔  جن کو آج بھی بہت خاص اہمیت حاصل ہے ۔  نورجہاں سن دو ہزار میں تئیس دسمبر کو کراچی میں وفات پا گئیں۔  لیکن ان کی آواز آج بھی ہمارے دلوں میں زندہ ہے ۔

Please follow and like us: